NRO

این آر او حاصل کرنے کی خواہش کرنے والوں کو کیا کرنا ہو گا؟

اسلام آباد (سحر نیوز) : نجی ٹی وی چینل کے پروگرام میں بات کرتے ہوئے سینئیر تجزیہ کار ایاز امیر نے کہا کہ جو لوگ چاہتے ہیں کہ ہمیں این آر او (NRO) مل جائے انہیں یہ دعا کرنی چاہئیے کہ چیف جسٹس ثاقب نثار یہاں سے چلے جائیں اور آئندہ چیف جسٹس ثاقب نثار جیسا کوئی بھی چیف جسٹس نہ آئے۔ ہونا یہ ہے کہ جو اگلے چیف جسٹس آ رہے ہیں ، وہ وہی ہیں جنہوں نے سیزیلین معفیا کا لفظ استعمال کیا تھا۔
ان کے بعد جو گلزار صاحب آ رہے ہیں ان کے بارے میں کراچی کے وکلا سے پوچھ لیں کہ ان کا دل کیسا ہے۔ اگر ملک قیوم جیسے جج ہوتے تو رونا کیا تھا ؟ ایاز امیر نے کہا کہ این آر او (NRO)کی خواہش رکھنے والوں کے ہاتھ سے اب بات نکل چکی ہے۔ یاد رہے کہ قبل ازیں ایک خبر آئی تھی کہ شریف خاندان پر مشکلات کا پہاڑ ٹوٹا تو انہوں نے این آر او حاصل کرنے کے لیے ہاتھ پاؤں مارنا شروع کردئے لیکن اندرون و بیرون ملک رابطوں کے باوجود شریف خاندان این آر او حاصل کرنے میں اب تک ناکام رہا۔

یہ بھی پڑھیں. سندھ کے اندر فارورڈ بلاک بن رہا ہے، فیصل واوڈا

شریف خاندان نے این آر او حاصل کرنے کے لیے بعض انٹرنیشنل پلیئرز تک رسائی کی بھی کوشش کی لیکن ان کو وہاں سے بھی ناکامی کا سامنا کرنا پڑا۔ حکومتی ذرائع کے مطابق شریف خاندان نے کرپشن کیسز میں معاملہ طے کرنے کے لئے حکومت تک اپنے مڈل مین بھیجے ۔ اسٹیبلشمنٹ کے طاقتور کواٹرز سے بھی مختلف لیولز پر رابطہ کیا گیا۔ نواز شریف اورشہباز شریف نے این آر او حاصل کرنے کے لیے علیحدہ علیحدہ کوشش بھی کی اور دونوں کی طرف سے مختلف مڈل مین حکومت اور اسٹیبلشمنٹ کے طاقتور کواٹرز سے بھی رابطے کرتے رہے جبکہ ان کے مڈل مین خلیجی ریاستوں سمیت بعض مغربی قوتوں تک بھی پہنچے ۔
بین الاقوامی قوتوں کے اعلٰی عہدیدران نے شریف خاندان کے مڈل مین کو ملنے سے انکار کرتے ہوئے واضح پیغام دیا کہ وہ اپنے ملک کی عدالتوں کا سامنا کریں اور قومی اداروں کے خلاف پراپیگنڈہ مہم چلانے کی بجائے اگر اپنا دفاع مضبوط بنائیں۔ اور اب سینئیر تجزیہ کار ایاز امیر نے بھی این آر او کے خواہشمند افراد کو بُری خبر سنا دی ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں