Punjab government

پنجاب حکومت کا ایک اور یوٹرن

لاہور(سحر نیوز) :پنجاب حکومت (Punjab government) نے پہلے تو بسنت منانے کا اعلان کیا لیکن پھر اپنے ہی اعلان پر یوٹرن بھی لے لیا جس سے پتنگ بازی کی انڈسٹری کےمالکان کو کروڑوں روپے کا نقصان ہوا۔ تفصیلات کے مطابق پنجاب حکومت نے بسنت منانے کا اعلان کیا تو بسنت شائقین میں خوشی کی لیر دوڑ گئی جبکہ پتنگ بازی انڈسٹری کے مالکان نے بھی بسنت کی تیاریاں شروع کر دیں لیکن بسنت کے اعلان پر تنقید کا سامنا کرنے کے بعد پنجاب حکومت نے بسنت منانے کے اعلان پر یوٹرن لے لیا جس سے انڈسٹری مالکان کو کروڑوں روپے کا نقصان ہو گیا جبکہ دوسری جانب حکومت کی جانب سے پتنگ بازی کرنے والوں کے خلاف کریک ڈاؤن بھی جاری ہے۔
لاہوریوں کا کہنا ہے کہ موٹرسائیکل کے آگے سیفٹی راڈ لگا کر اور دھاگے کی موٹائی کم کر کے بسنت کو منایا جا سکتا ہے۔

لاہوریوں کا کہنا ہے کہ بسنت تفریح کے ساتھ ساتھ ایک بہترین معاشرتی سرگرمی بھی ہے کیونکہ ایسے تہوار معاشرے سے ڈپریشن اور بے چینی کو کم کرنے میں مدد دیتے ہیں۔ لہٰذا بسنت منائی جانی چاہئیے اور پنجاب حکومت کو چاہئیے کہ اس حوالے سے ضروری اقدامات کرے۔

واضح رہے کہ 18 دسمبر کو وزیراعلیٰ پنجاب عثمان بزدار(Punjab government) نے بسنت منانے کے لیے دلچسپی ظاہر کی تھی۔ جس کے تحت وزیراعلیٰ پنجاب نے پتنگ بازی کے تہوار کو منانے کے لیے کمیٹی تشکیل دے دی ۔ بسنت منانے کا جائزہ لینے والی کمیٹی کے سربراہ وزیرقانون پنجاب راجہ بشارت ہوں گے۔ بسنت کے دوران پتنگ بازی کی اجازت دینے کے امور کا جائزہ لے گی۔کمیٹی پتنگ بازی کے نقصانات سمیت دیگر امور کا جائزہ لے گی۔

یہ بھی پڑھیں.نوازشریف کی سزا معطلی اور ضمانت کی درخواست اپیل کے ساتھ سنی جائےگی

بسنت تہوار کے دوران پتنگ بازی کی اجازت کا فیصلہ کمیٹی کی رپورٹ پر کیا جائے گا۔لاہور ہائیکورٹ میں بسنت منانے کے اعلان کے خلاف درخواست بھی دائر کی گئی تھی جبکہ بسنت منانے کے اعلان پر پنجاب حکومت کو تنقید کا سامنا بھی کرنا پڑا جس پر حکومت نے بسنت منانے کے اعلان پر یوٹرن لے لیا تھا۔حکومت پنجاب کے اس اعلان پر لاہوریوں میں مایوسی کی لہر دوڑ گئی تھی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں