Behria Town

بحریہ ٹاؤن منصوبہ ملک ریاض کا نہیں بلکہ کس کا تھا ایک اور کیس سامنے آ گیا

اسلام آباد(سحر نیوز) اسکینڈلز میں گھرے بحریہ ٹاؤن (Behria Town) کا ایک اور سکینڈل سامنے آ گیا۔میڈیا رپورٹس میں بتایا گیا ہے کہ آصف عارف نامی شخص نے دعویٰ کیا ہے کہ بحریہ ٹاؤن منصوبہ ملک ریاض نے دھوکے سے ہتھیایا ہے۔یہ منصوبہ میں نے اور ساتھیوں نے مل کر شروع کیا تھا۔آصف عارف کا مزید کہنا تھا کہ بحریہ فاؤنڈیشن نارتھ پاکستان انڈسٹریل کمپلیکس اور یونیکون انٹرنیشنل نے مل کر منصوبہ شروع کیا تھا۔
انہوں نے یہ بھی دعویٰ کیا ہے کہ ملک ریاض وائس ایڈمرل (ر) جاوید اقبال کے بہنوئی کا پارٹنر تھا۔ وائس ایڈمرل (ر) جاوید اقبال نے ملک ریاض (Behria Town) کو مشاورت کے لیے شامل کیا تھا۔ملک ریاض نے بحریہ فاؤنڈیشن نارتھ کے لیٹر بھی غیر قانونی طور پر استعمال کیا۔آصف عارف نے ملک ریاض پر یہ بھی الزام عائد کیا ہے کہ انہوں نے بحریہ ٹاؤن کا نام دھوکے سے اپنے نام کروایا۔

یہ بھی پڑھیں. وزیراعظم کو استحقاق نہیں کہ نیب کی کاروائی کا سامنا نہ کریں،چیئرمین نیب

آصف عارف نے ایچ آر سی میں درخواست بھی جمع کروا دی ہے۔جب کہ آصف عارف نے چیف جسٹس آف پاکستان میاں ثاقب نثار سے اس تمام معاملے کا نوٹس لینے کی بھی اپیل کی ہے۔ آصف عارف کا کہنا ہے کہ اس اسکینڈل کا منظر عام پر لانے میں اس لیے دیر ہوئی کیونکہ ہمیں کچھ وکلا نے مشورہ دیا تھا کہ ملک ریاض بہت طاقتور ہیں اور ہم ان کے خلاف کیس نہیں جیت سکیں تاہم اب صورتحال مختلف ہے۔
آصف عارف کا مزید کہنا ہے کہ جب ملک ریاض (Behria Town) کے ساتھ ہمارا معاہدہ طے ہوا تو بعد میں ملک ریاض نے بحریہ فاؤنڈیشن نارتھ کے لیٹرز بھی غیر قانونی طور پر استعمال کیے۔ یاد رہے کہ رواں برس سپریم کورٹ نے کراچی میں بحریہ ٹاؤن کو سرکاری زمین الاٹ کرنے اور زمین کے تبادلے کو غیر قانونی قراردیا تھا اور تمام اراضی سندھ حکومت کی ملکیت قرار دے دی تھی۔ عدالت عظمیٰ نے بحریہ ٹاؤن کراچی کو پلاٹوں کی خریدو فروخت سے روک دیا تھا اور سندھ حکومت کوبحریہ ٹاؤن کوزمین دینے یا نہ دینے کی مجاز قراردیتے ہوئے نئی شرائط پر معاہدہ کرنے کی ہدایت کی تھی۔ (Behria Town)

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں