قندیل بلوچ(qandeel baloch) قتل کیس کافیصلہ تین سال بعد آگیا،بھائی محمد وسیم کو عمرقید

qandeel baloch

قندیل بلوچ(qandeel baloch) کو 15 جولائی 2016 کو مظفرآباد میں قتل کیا گیا تھا اور 17 جولائی 2016 سے 26 ستمبر 2019 تک
اس کیس کی 152 سماعتیں ہوئیں۔ ماڈل کورٹ نے گزشتہ روز کیس کا فیصلہ محفوظ کر لیا تھا جو آج سنا دیا گیا ہے۔

مفتی عبدالقوی، قندیل بلوچ کے ہمراہ اس وقت منظرعام پر آئے تھے جب 2016 میں رمضان المبارک کے
دوران ماڈل نے چند سیلفیز اور ویڈیوز سوشل میڈیا پر شیئر کیں جس پر مختلف حلقوں کی جانب سے
انہیں شدید تنقید کا سامنا کرنا پڑا تھا۔

عدالت نے اپنے مختصر فیصلے میں لکھا کہ ملزم وسیم نے اقبال جرم کیا جس پر انہیں عمر قید کی
سزا سنائی جاتی ہے جب کہ دیگر تمام ملزمان جن میں مفتی عبدالقوی سمیت قندیل بلوچ کے بھائی عارف،
کزن حق نواز، اسلم شاہین اور ٹیکسی ڈرائیور عبدالباسط شامل تھے کو بری کر دیا گیا ہے۔

ہالی وڈ فلم ’’چارلیزاینجلز(Charlie’s Angels)‘‘ 30اکتوبر کو ریلیز ہو گی

ماڈل قندیل بلوچ(qandeel baloch) کا تعلق ڈیرہ غازی خان کے نواحی علاقے شاہ صدر دین سے تھا۔ان کا اصل نام فوزیہ عظیم
تھا مگر وہ سوشل میڈیاپرقندیل بلوچ کے نام سے مشہورتھیں ۔انہوں نے شوبز کی دنیا میں قدم رکھالیکن
انہیں ابتدائی طورپر کامیابی نصیب نہ ہوئی۔انہوں نے اداکاری کے ساتھ ساتھ گلوکاری کے پروگراموں میں
بھی حصہ لیا مگر انہیں مایوسی کاسامنا کرنا پڑا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں