Governor House walls

گورنر ہاؤس کی دیواریں (Governor House walls) گرانے کا اقدام لاہور ہائیکورٹ میں چیلنج

لاہور (سحر نیوز) : وزیراعظم عمران خان کے احکامات پر پنجاب حکومت نے گورنر ہاؤس کی دیواریں (Governor House walls) گرانے کا کام شروع کیا لیکن حکومت کا یہ اقدام لاہور ہائیکورٹ میں چیلنج کر دیا گیا ہے۔ تفصیلات کے مطابق لاہور ہائیکورٹ میں گورنر ہاؤس کی دیواریں گرانے کے خلاف ایک درخواست دائر کی گئی جس میں استدعا کی گئی کہ فوری طور پر گورنر ہاؤس کی دیواریں (Governor House walls) گرانے کا کام روکنے کا حکم جاری کیا جائے۔
درخواستگزار کا کہنا ہے کہ گورنر ہاؤس ایک تاریخی ورثہ ہے، اور ایک تاریخی ورثے کی دیواروں کو مسمار کرنا غیر قانونی عمل ہے۔ وزیراعظم عمران خان کے احکامات پر گورنر ہاؤس کی دیواروں (Governor House walls)(Governor House walls) کو گرانے کا کام گذتشہ روز بروز اتوار شروع کیاگیا ، ابتدائی مرحلے میں مال روڈ سے الحمرا تک دیوار گرائی جائے گی۔

گورنر پنجاب چودھری محمد سرور نے خود بھی دیواریں گرانے (Governor House walls) کے اس اقدام کا تذکرہ کیا تھا۔

وزیراعظم عمران خان کے احکامات پر عملدرآمد کرتے ہوئے گورنر ہاؤس کی انتظامیہ نے گورنر ہاؤس کی دیواریں (Governor House walls) گرانے کا کام شروع کیا جس کے بعد یہاں ایک جنگلا لگایا جائے گا۔ ایک تقریب سے خطاب کرتے ہوئے گورنر پنجاب چودھری محمد سرور کا کہنا تھا کہ حکومت کی جانب سے گورنر ہاؤس گرائے (Governor House walls) جانے کی اطلاعات بے بنیاد تھیں۔ عام انتخابات سے قبل پاکستان تحریک انصاف نے اقتدار میں آنے کے بعد گورنر ہاؤس کی دیواریں گرانے اور گورنر ہاؤس کو عوام کے لیے کھولنے کا عہد کیا تھا۔
ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ گورنر ہاؤس کو میوزیم یا لائبریری بنانے کا فیصلہ خود وزیراعظم عمران خان ہی کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ اقتدار کے 100 دنوں کے بعد پاکستان تحریک انصاف نے خود کو عوام کے سامنے احتساب کے لیے پیش کیا۔ انہوں نے مزید کہا کہ پاکستان تحریک انصاف کی حکومت میں کسی قسم کی کرپشن کی کوئی جگہ موجود نہیں ہے۔ اگر کرپشن کا کوئی بھی اسکینڈل ہوا تو اسے منظر عام پر لایا جائے گا۔ (Governor House walls)

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں