Imran Khan

عمران خان کے فوج سے معاملات کس صورت میں بگڑ سکتے ہیں؟

لاہور (سحر نیوز) : (Imran Khan) معروف صحافی صابر شاکر کا کہنا ہے کہ جب آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ پہلی بار سابق وزیراعظم نواز شریف سے ملے تھے اور ان کو سلیوٹ کیا اور اپنی خدمات پیش کیں تو جنرل قمر جاوید باجوہ نے نواز شریف کو کہا تھا کہ آپ میرے باس ہیں آپ جو بھی حکم دیں گے ہم ا س کی تعمیل کریں گے۔اور جب آپ ہم سے کوئی رائے لیں گے تو ہم وہ آپ کو دیں گے۔
صابر شاکر کا کہنا تھا کہ آرمی چیف نے نواز شریف سے پہلی ملاقات میں ہی انہیں یہ اعتماد دیا تھا تاہم بعد میں پاناما پیپرز آگئے جس سے بات بگڑی۔تب نواز شریف نے کہا کہ آپ کے دو برگیڈئیر کام خراب کر رہے ہیں آپ انہیں سمجھائیں تاہم آرمی چیف نے نواز شریف اور اسحاق ڈار کو صاف صاف کہہ دیا تھا کہ اس کام میں آپ جائیں اور سپریم کورٹ جانے اس تمام معاملے میں تو میں کوئی کردار ادا نہیں کر سکتا۔

یہ بھی پڑھیں.ڈالر جلد ہی 150 روپے کا ہونے والا ہے

اس کے بعد جب نئی حکومت میں آرمی چیف کی وزیراعظم عمران خان (Imran Khan) سے ملاقات ہوئی تو عمران خان بہت تکلفانہ انداز میں کہتے ہیں کہ آپ ہمارے پارٹنر ہیں تو آرمی چیف نے جواب دیا کہ نہیں سر آپ میرے باس ہیں میں آپ کے ماتحت ہوں۔حکم آپ کا ہو گا اور پالیسی بھی آپ کی ہو گی تاہم آپ ہم سے کوئی ان پٹ لیں گے تو ہم وہ دیں گے،صابر شاکر کا کہنا تھا کہ آرمی چیف نے نواز شریف کی طرح عمران خان کو بھی اسی طرح اعتماد دیا۔

لازمی پڑھیں.وزیراعظم کا پنجاب پولیس میں اصلاحات کے لیے بڑا فیصلہ

لیکن اگر کل کو عمران خان (Imran Khan) بھی اس طرح کی فرمائش کرتے ہیں تو پھران کے عمران خان (Imran Khan) سے بھی تعلقات خراب ہو سکتے ہیں۔تاہم اب تک تمام معاملات بہت بہترین طریقے سے چل رہے ہیں۔صابر شاکر کا کہنا ہے کہ آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجود نے دنوں حکومتوں کو اعتماد دیا تھا۔واضح رہے ان تک وزیراعظم عمران خان یہی کہتے آ رہے ہیں کہ فوج اور حکومت ایک پیج پر ہے اور ملک ایک بار پھر سے ترقی کی راہوں پر گامزن ہو گا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں