Khalil's family

سانحہ ساہیوال کے مقتول خلیل کے خاندان کی صدرسے ملاقات طے نہیں تھی

اسلام آباد (سحر نیوز) : گذشتہ روز سانحہ ساہیوال میں مقتول خلیل (Khalil’s family) کے اہل خانہ صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی سے ملاقات کے لیے اسلام آباد پہنچے لیکن ان کی صدر مملکت سے ملاقات نہیں ہو سکی۔ جس پر انہوں نے حکومت کو سخت تنقید کا نشانہ بنایا۔ تاہم ترجمان ایوان صدر نے خلیل کے اہل خانہ کی صدر سے ملاقات طے ہونے پر وضاحتی بیان جاری کر دیا ہے۔
ترجمان ایوان صدرنے وضاحتی بیان میں کہا کہ سانحہ ساہیوال میں متاثرہ فیملی (Khalil’s family) کی صدرڈاکٹرعارف علوی کے ساتھ کوئی ملاقات طے نہیں تھی، لہٰذا اس حوالے سے قیاس آرائیوں سے اجتناب کیا جائے ۔ واضح رہے کہ گذشتہ روز لاہور میں اپنے وکیل شہباز بخاری کے ہمراہ پریس کانفرنس کے دوران مقتول خلیل کے بھائی جلیل نے کہا تھا کہ صدر مملکت ڈاکٹرعارف علوی اور چیئرمین سینٹ نے خصوصی ملاقات کے لیے ان کے خاندان کو اسلام آباد بلایا تھا۔

یہ بھی پڑھیں.ملک میں سیاحت کو فروغ دینے کے لیے پاکستان تحریک انصاف کی حکومت پاکستان کے ثقافتی اور روایتی تہواروں کو بحال کرنے جا رہی ہے،

لیکن وہاں پہنچ کر علم ہوا کہ صدر مملکت خود کراچی کے دورے پر ہیں۔ ہمارا خاندان اسلام آباد کی سڑکوں پر خوار ہوتا رہا ۔ حکومت واقعہ میں سنجیدگی دکھانے کے بجائے متاثرہ خاندان کا تماشا بنا رہی ہے ۔ قاتل اہلکاروں کو مکمل تحفظ دیا جا رہا ہے جبکہ مدعی متاثرہ خاندان سڑکوں پر دھکے کھا رہا ہے ۔ جلیل کے وکیل شہباز بخاری نے کہا کہ اگر حکومت اور تحقیقاتی اداروں کی جانب سے دو روز میں اہم پیشرفت نہ کی گئی تو پیر کو عدالت کا دروازہ کھٹکھٹائیں گے ۔
سانحہ ساہیوال میں متاثرہ خلیل (Khalil’s family) کے خاندان نے تحقیقات میں پیش رفت پر عدم اعتماد کا اظہار بھی کیا۔ انہوں نے کہا کہ 5 اہلکاروں کی گرفتاری کے حوالے سے بتایا گیا ، دیگر اہلکار گرفتار کیوں نہیں کئے گئے؟ مقتول خلیل کے بھائی نے مطالبہ کیا کہ واقعہ میں ملوث دیگر 11 اہلکاروں کو بھی فوری گرفتار کیا جائے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں