جماعت اسلامی کا چئیرمین سینیٹ(chairman senate) کے خلاف تحریک عدم اعتماد پر کسی کا ساتھ نہ دینے کا فیصلہ

chairman senate

ووٹنگ کے دوران جماعت اسلامی کے سینیٹرز ایوان سے غیر حاضر رہیں گے

اسلام آباد ( تازہ ترین اخبار۔ 22 جولائی 2019ء) : چئیرمین سینیٹ(chairman senate) صادق سنجرانی
کے خلاف تحریک عدم اعتماد کے تحت ووٹنگ کے معاملے پر جماعت اسلامی
نے کسی کا ساتھ نہ دینے کا فیصلہ کر لیا ہے۔ تفصیلات کے مطابق جماعت اسلامی
نے چئیرمین سینیٹ کے خلاف عدم اعتماد کے معاملے پر ووٹنگ کا حصہ نہ بننے
کا اعلان کیا ۔ جماعت اسلامی کے سینیٹرز ووٹنگ کے دن ایوان
سے غیر حاضر رہیں گے۔

یاد رہے کہ چئیرمین سینیٹ(chairman senate) صادق سنجرانی نے 23 جولائی کو سینیٹ کا اجلاس طلب کر رکھا ہے۔
اجلاس 23 جولائی بروزمنگل سہ پہر3 بجے ہوگا۔ اجلاس میں اپوزیشن کی تحریک عدم
اعتماد میں ووٹنگ کروائی جائے گی۔ قبل ازیں بیس جولائی کو چئیرمین سینیٹ (chairman senate)
صادق سنجرانی نے اپوزیشن کے خط کا جواب دیا تھا ۔ چئیرمین سینیٹ کی جانب سے
اپوزیشن کے7 پارلیمانی رہنماؤں کو خط کے ذریعے جواب دیا گیا ،
چئیرمین سینیٹ کا جواب 3 صفحات پرمشتمل ہے۔

سزا معطل ہونے سے کوئی نا اہل شخص الیکشن(election) کے لیے اہل نہیں ہو سکتا

چئیرمین سینیٹ (chairman senate)صادق سنجرانی نے اپوزیشن کے خط کے جواب میں
کہا کہ آئین میں چئیرمین یا ڈپٹی چیئرمین کوہٹانے کے لیے عدم اعتماد کی تحریک کا کوئی
تصور موجود نہیں ہے، ریکوزیشن اجلاس سے متعلق 2016ء کی رولنگ واضح ہے ۔
صادق سنجرانی کا مزید کہنا تھا کہ میں پارلیمنٹ کی بالادستی قائم رکھنے کےلیے لڑ
رہا ہوں، میں قرارداد کا مقابلہ کرنے کے لیے تیار ہوں۔

انہوں نے کہا کہ اپوزیشن کی ریکوزیشن پر اجلاس بلانے کے لیے وزارتِ پارلیمانی امور
کو لکھ چکا ہوں، میں اپنی ذات کی جنگ نہیں لڑ رہا، ایوان کے تقدس کی جنگ لڑ رہا ہوں ۔
خیال رہے کہ اپوزیشن جماعتیں چئیرمین سینیٹ (chairman senate)صادق سنجرانی کے خلاف تحریک سینیٹ
سیکرٹریٹ میں جمع کروا چکی ہیں، اپوزیشن نے چئیرمین سینیٹ کے لیے حاصل
بزنجو کو اُمیدوار نامزد کر رکھا ہے، جبکہ اس کے بعد پاکستان تحریک انصاف
نے بھی ڈپٹی چئیرمین سینیٹ کو ہٹانے کے لیے تحریک جمع کروا لی ہے ۔
اس سلسلہ میں حکومت کی اتحادی جماعتوں سے مشاورت کا سلسلہ بھی جاری ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں