مقبوضہ کشمیر کی کرکٹ ٹیم(cricket team) کا بھارت میں مقامی ٹورنامنٹ کھیلنے سے انکار

سکیورٹی معاملات کی بنا پر مقبوضہ کشمیر کی کرکٹ ٹیم(cricket team) وشاکا پٹنم میں ٹورنامنٹ نہیں کھیلے گی

cricket team

سرینگر( تازہ ترین اخبار۔ 20 اگست2019ء) بھارت کی جانب سے مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت ختم ہونے کے بعد کشیدگی اپنے عروج پر پہنچ چکی ہے، بھارتیحکومت نے 5 اگست کو مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت ختم کرنےکا گھناﺅنا اقدام کیا تھا۔تفصیلات کے مطابق مقبوضہ کشمیر کی ٹیم(cricket team) وشاکا پٹنم میں ہونےوالی وزی ٹرافی میں حصہ لے رہی تھی مگر سیکورٹی معاملات اور بھارت کی جانب سے غیر ذمے داری کا مظاہرہ کرنے پرمقبوضہ کشمیر کی ٹیم نے ٹورنامنٹ سے خود کو باہر نکال لیا ہے۔مقبوضہ کشمیر کی کرکٹ(cricket team) ایسوسی ایشن کو گورنر ستیہ پال ملک کی طرف سے سیکورٹی کی کوئی ضمانت نہیں دی جاسکی جن کے ذمے کھلاڑیوں اور دیگر سٹاف کے سفری انتظامات کو یقینی بنانا تھا۔ اس کےساتھ ساتھ انکی جانب سے کپتان پرویز رسول سمیت متعدد کھلاڑیوں سے کوئی رابطہ ہی نہیں کیا گیا۔

حسن علی(hassan ali) کے نکاح میں 25 افراد شریک ہوں گے

مقبوضہ کشمیر کی کرکٹ(cricket team) ایسوسی ایشن کے سی ای او شاہ بخاری کا کہنا ہے کہ سب سے بڑا مسئلہ کھلاڑیوں سے رابطہ اور ابلاغ نہ ہونا ہے۔ہم نے اپنی ایسوسی ایشن کے دفتر میں تمام کھلاڑیوں کے موبائل فون نمبرز فراہم کررکھے تھے آج کے دور میں چونکہ یہاں کوئی بھی لینڈ لائن نمبر استعمال نہیں کرتا تو ہم سب موبائل فون نمبرز پر ہی انحصار کرتے ہیں۔ ہم نے کوشش کرکے اپنے کچھ کھلاڑیوں سے رابطہ ممکن بنایا مگر مقبوضہ وادی میں مسلسل کرفیو ہے جبکہ فون اور انٹرنیٹ کی بندش کے باعث ہم اپنے بیشتر کھلاڑیوں سے رابطہ قائم نہیں کرپائے ہمیں یہ بھی علم نہیں ہے کہ اس وقت ٹیم کے کپتان پرویز رسول کہاں ہیں؟جب ان سے پوچھا گیا کہ ایسوسی ایشن نے ان کھلاڑیوں سے مسلسل رابطے کو ممکن کیوں نہیں بنایا تو اسکے جواب میں انہوں نے کہا کہ ہم مقبوضہ وادی کے کرفیو زدہ گاﺅں دیہات میں اپنی گاڑیاں کیسے بھیج سکتے ہیں کیونکہ ہمیں قطعی علم نہیں ہے کہ وہاں کیا ہورہا ہے، ہم اس حوالے سے کسی قسم کا رسک نہیں لینا چاہتے کیونکہ یہ بی سی سی آئی کا ٹورنامنٹ نہیں بلکہ ایک مقامی ٹورنامنٹ ہے اسلئے ہم نے یہی بہتر سمجھا کہ اس ٹورنامنٹ میں حصہ ہی نہ لیا جائے۔اگست کے پہلے ہفتے میں بھارت کی جانب سے مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت ختم ہونے کے بعد سے پاکستان اور بھارت کے درمیان کشیدگی بہت بڑھ چکی ہے، 5 اگست کے بعد سے مقبوضہ وادی میں مسلسل کرفیو نافذ ہے۔ وادی کے حالات سے دنیا کو بے خبر رکھنے کےلئے قابض فوج نے فون اورانٹرنیٹ بند کررکھا ہے جبکہ پاکستان کی جانب سے مسلسل عالمی برادری سے استدعا کی جارہی ہے کہ وہ مقبوضہ وادی میں بھارتی مظالم کا نوٹس لے۔ 

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں