قندیل بلوچ(qandeel baloch) قتل کیس،قندیل بلوچ کے والدین نے بیٹوں کو معاف کر دیا

قندیل بلوچ(qandeel baloch) کے قتل میں غیرت کی کہانی بنائی گئی جو حقائق کے خلاف ہے ، میرے بیٹوں کو باعزت بری کیا جائے۔ قندیل بلوچ کے والد کی عدالت میں جمع کروائے گئے بیان حلفی میں استدعا

qandeel baloch

ملتان (تازہ ترین اخبار۔ 21 اگست 2019ء) : پاکستان کی ماڈل قندیل بلوچ vقتل کیس میں قندیل کے والدین نے اپنے بیٹوں کو معاف کر دیا۔ تفصیلات کے مطابق قندیل بلوچ کے والد نے بیٹوں کو معاف کرنے کا بیان حلفی عدالت میں جمع کروا دیا ہے۔ قندیل بلوچ کے والد عظیم بلوچ نے بیان حلفی جمع کرواتے ہوئے عدالت سے استدعا کی کہ میرے بیٹوں کو باعزت بری کیا جائے۔عدالت میں جمع کروائے جانے والے بیان حلفی کے مطابق قندیل بلوچ (qandeel baloch)کے قتل میں غیرت کی کہانی بنائی گئی جو حقائق کے خلاف ہے ۔ انہوں نے بیان حلفی میں کہا کہ قندیلقتل کا مقدمہ 16 جولائی 2016ء کو درج ہوا جبکہ غیرت کے قانون میں ترمیم 22 اکتوبر 2016 میں ہوئی، غیرت کے قانون 311 میں ترمیم بعد میں ہوئی لہٰذا اس کیس پر نئے قانون کا اطلاق نہیں ہوتا ضابطہ فوجداری کے زیر دفعہ 345 کے تحت ملزمان کو بری کیا جائے۔

اداکار حمزہ علی عباسی(Hamza Ali Abbasi) اور اداکارہ نیمل خاور کی شادی طے پاگئی

ماڈل کورٹ کے جج نے قندیل بلوچ (qandeel baloch)کے والد عظیم بلوچ کے صلح نامہ کے بیان حلفی پر بحث کے لیے پراسیکیوشن اور وکلاء کو طلب کرلیا ہے۔ یاد رہے کہ ماڈل قندیل بلوچ کو 16 جولائی 2016ء کی شب ملتان کے علاقہ مظفر آباد میں قتل کر دیا گیا تھا ۔ معروف سوشل میڈیا سٹار قندیل بلوچ کو کو ملتان میں ان کے آبائی گھر میں قتل کیا گیا تھا۔ رواں برس 4 مئی 2019ء کو قندیل بلوچ کے بھائی عارف کو انٹرپول کے ذریعے سعودی عرب میں گرفتار کیا گیا تھا۔۔ قندیل بلوچ(qandeel baloch) کے بھائی عارف کے خلاف پی پی سی کی شق 109 کے تحت ایف آئی آر درج کی گئی تھی لیکن عارف گذشتہ تین برس سے گرفتاری کے ڈر سے سعودی عرب میں مقیم تھا جسے ملتان پولیس نے اس کے کفیل کی مدد سے گرفتار کیا تھا تاہم اب قندیل بلوچ کے والدین نے اپنی بیٹی کو قتل کرنے والے دونوں بیٹوں کو معاف کر دیا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں