حکومت برآمدات(export) بڑھانے کیلئے تمام اقدامات بروئے کار لائے گی، اینٹی ڈمپنگ ڈیوٹی کا مسئلہ جلد حل کر لیا جائے گا،

برآمدی اہداف کے حصول کیلئے صنعتی ، کاروباری ، برآمدی شعبہ کو بھر پور معاونت فراہم کی جائیگی، محکمہ میں کرپشن یا تاخیری حربے قابل برداشت نہیں، جو افسر محکمانہ ہدایات پر عمل نہیں کریگا اس کے ساتھ کوئی رعائت نہیں برتی جائیگی،چیف کلکٹر کسٹمز زیبا حئی کی فیصل آباد ڈرائی پورٹ کے دورہ کے موقع پر تاجر تنظیموں کے نمائندوں سے بات چیت

export

فیصل آباد ۔ (اخبارتازہ ترین – اے پی پی۔ 29 اگست2019ء) چیف کلکٹر کسٹمز فیڈرل بورڈ آف ریونیو ز یبا حئی نے کہا ہے کہ حکومت برآمدات (export)بڑھانے کیلئے تمام اقدامات بروئے کار لائے گی اور اینٹی ڈمپنگ ڈیوٹی کا مسئلہ جلد حل کر لیا جائے گا جبکہ برآمدی اہداف کے حصول کیلئے صنعتی ، کاروباری ، برآمدی(export) شعبہ کو بھر پور معاونت فراہم کی جائے گی نیز محکمہ میں کرپشن یا تاخیری حربے قابل برداشت نہیں لہٰذا جو افسر محکمانہ ہدایات پر عمل نہیں کرے گا اس کے ساتھ کوئی رعائت نہیں برتی جائے گی۔جمعرات کی دوپہر فیصل آباد ڈرائی پورٹ کے دورہ کے موقع پر فیصل آباد چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری ، فیصل آباد وومن چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری ، فیصل آبا دسمال ٹریڈرز چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری،آل پاکستان ٹیکسٹائل پراسیسنگ ملز ایسوسی ایشن ، آل پاکستان ٹیکسٹائل ایکسپورٹرز ایسوسی ایشن ،پاکستان ہوزری مینو فیکچررز ایسوسی ایشن ،آل پاکستان بیڈ شیٹس اینڈ اپ ہولسٹری مینو فیکچررز ایسوسی ایشن،پاکستان ٹیکسٹائل ملز ایسوسی ایشن،پاکستان کاٹن پاور لومز اونرز ایسوسی ایشن اور دیگر صنعتی ، کاروباری ، تجارتی ، در آمدی، برآمدی تنظیموں کے عہدیداران و ممبران سے ملاقات کے دوران انہوںنے کہاکہ فیصل آباد ڈرائی پور ٹ کو مزید فعال بنایا جائے گا تاکہ نجی فرمز اس سے بھر پور استفادہ کر سکی۔

انٹربینک میں (dollar)ڈالر24 پیسےمہنگا ،سٹاک مارکیٹ میں 311 پوائنٹس کا اضافہ

انہوںنے کہاکہ فیصل آباد ڈرائی پورٹ کے ذریعے کنسائنمنٹس کی آمدو رفت کو مزید آسان و باکفائت بنانے کے لئے بھی اقدامات جاری ہیں۔ انہوںنے کہاکہ ان کے ماڈل کسٹمز کلکٹوریٹ فیصل آباد ڈرائی پورٹ کے دورہ اور سٹیک ہولڈرز سے ملاقات کا مقصد یہ بھی ہے کہ نہ صرف آپ کے مسائل سنیں بلکہ ان کے فوری حل کے لئے آپ سے تجاویز بھی حاصل کی جائیں۔انہوںنے بتایا کہ چیئر مین فیڈرل بورڈ آف ریونیو شبر زیدی کے دورہ فیصل آ باد کے بعد ان کا کہنا ہے کہ چونکہ فیصل آبا دپاکستان کا تیسرا بڑا اور اہم صنعتی شہر ہے جس کا ملکی ٹیکسٹائل برآمدات (export)میں بہت بڑا حصہ ہے لہٰذا یہاں کے تاجروں کے مسائل کو ترجیحی بنیادوں پر حل کیا جانا اشد ضروری ہے یہی وجہ ہے کہ وہ چیئر مین ایف بی آر کی خصوصی ہدائت پر آج فیصل آباد میں موجود ہیں۔انہوںنے کہا کہ کسٹمز کلکٹوریٹ تمام کنسائنمنٹس کو بروقت کلیئر کروانے کے حوالے سے تاجروں کی مکمل معاونت کرے گا جس کیلئے فیصل آباد ڈرائی پورٹ کے حکام کو سخت ہدایات جاری کر دی گئی ہیں۔انہوںنے بتایا کہ حکومت تمام سٹیک ہولڈرز کی مشاورت سے قابل عمل اقدامات تجویز کر رہی ہے تاہم بزنس مین حضرات انفرادی طور پر بھی اپنے مسائل کے حل کیلئے ان سے رابطہ کر سکتے ہیں۔انہوںنے کہا کہ کلیئرنس سسٹم کے پراسیس میں اگر کسی جگہ پر کوئی خامیاں موجود یا رکاوٹیں درپیش ہیں تو وہ ان کے ازالہ کیلئے فوری کاروائی ممکن بنائیں گی کیونکہ اگر کاروباری ، صنعتی ، تجارتی ، درآمدی ، برآمدی سر گرمیاں فروغ پائیں گی تو حکومت کو ٹیکسوں کی مد میں ریونیو حاصل ہو گا اور ملکی معیشت مضبوط ہو نے سمیت قومی تعمیر و ترقی اور عوامی خوشحالی ممکن ہو سکے گی۔انہوںنے کہا کہ وہ اور ان کا محکمہ حکومتی ہدایات ، وزیر اعظم کے احکاما ت اور چیئر مین ایف بی آر کی گائیڈ لائنز کے مطابق تمام سٹیک ہولڈرز بشمول ایوان ہائے صنعت وتجارت کو ساتھ لے کر چلے گا یہی نہیں بلکہ تحریری احکامات کے تحت انہیں آڈٹ کے عمل میں بھی شامل کیا جائے گا تاکہ اس پراسیس کو شفاف بنایا جا سکے۔انہوںنے کہا کہ ان کی توجہ فیصل آباد ڈرائی پورٹ اور کسٹمز کلکٹریٹ فیصل آباد میں سٹاف کی کمی کی جانب مبذول کروائی گئی ہے لہٰذا وہ فوری طور پر سٹاف کی کمی دور کرنے کیلئے اقدامات اٹھائیں گی۔انہوںنے کہا کہ جب بھی کوئی نیا ماڈیول لانچ ہوتا ہے تو عملے کو ٹریننگ کیلئے کراچی بھیجا جاتا ہے اس طرح عملے کی ٹریننگ کا عمل مسلسل جاری رہتا ہے۔ انہوںنے کہا کہ آپ مروجہ طریقہ کار کے مطابق پہلے فائل ا ے سی کو بھیجیں پھراے سی کلکٹر کو بھیجے گا۔انہوںنے کہا کہحکومت اس میں بہت کلیئر ہے کہ ہم ہر صورت میں ایکسپورٹ کو بڑھانا چاہتے ہیں لہٰذا تمام سٹیک ہولڈرز کے ساتھ مکمل تعاون یقینی بنایا جائے گا ۔ انہوںنے فیصل آباد کے تاجروں کے مسائل کے حل کیلئے ہر ماہ فیصل آبا دکے دورہ کا بھی اعلان کیا۔اس موقع پر سپرنٹنڈنٹ کسٹمز فیصل آباد ڈرائی پورٹ عرفان ممتاز اور دیگر حکام بھی موجود تھے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں