بچیوں(child) کےزیادتی کی ویڈیوز

ملتان سے ایک ایسی سفاک عورت کوگرفتارکیا گیا ہے جوبچیوں(child) کےزیادتی کی ویڈیوزبناتی اوران ویڈیوزکوبیرون ملک اپنےشوہرکو بھیجتی تھی۔

child

رابعہ نامی خاتون نےگھرمیں بیوٹی پارلربنارکھا ہے۔ دس سالہ بچی(child) کومل نےاپنے ساتھ زیادتی اورویڈیوزبنانے کی روداد پولیس کو سنا دی۔ دس سالہ بچی(child) کومل ملزمہ کےگھرکام کرتی تھی۔بچی نے انکشاف کیا ہے کہ رابعہ کےبھائی اوربھانجے نے اسےزیادتی کانشانہ بنایا اوررابعہ نےوڈیو بنائی۔

پولیس کا کہنا ہے کہ ملزمہ کو حراست میں لے لیا گیا ہے جبکہ اس سے تفتیش جاری ہے۔ خیال رہے کہ اس سے قبل بھی ایسی ہی نوعیت کا ایک واقعہ رپورٹ ہوا تھا۔ جب راولپنڈی پولیس نے 45 لڑکیوں کی نازیبا اور برہنہ ویڈیوز بنانے والے شخص کو گرفتار کر لیا جبکہ اس کے قبضے سے کئی ویڈیوز اور تصاویر بھی برآمد کر لی گئی تھیں۔

آج سارا پاکستان کشمیریوں کے ساتھ کھڑا ہے-مودی(Narendra Modi) سن لے

راولپنڈی میں پولیس نے ایم ایس سی کی طالبہ اور شادی شدہ لڑکی کے ساتھ زیادتی کرنے اور ویڈیو بنانے کے مقدمے میں پیش رفت کا دعویٰ کرتے ہوئے بتایا کہ تھانہ سٹی پولیس نے لڑکی کو زیادتی کا نشانہ اور برہنہ ویڈو بنانے والے ملزم کو اس کی بیوی سمیت گرفتار کر لیا ہے۔ترجمان پولیس کے مطابق واقعہ کا مقدمہ تھانہ سٹی میں اغواء اور زیادتی کی دفعہ کے تحت درج تھا۔ ملزم قاسم کا عدالت سے جسمانی ریمانڈ حاصل کرلیا گیا ہے جبکہ اس کی اہلیہ کرن کو جوڈیشل ریمانڈ پر جیل بھجوا دیا گیا ہے۔ اس حوالے سے سی پی او فیصل رانا کے مطابق ملزمان نے انکشاف کیا کہ انہوں نے اب تک 45 لڑکیوں کی ویڈیوز بنائیں۔ ملزمان زیادتی کا نشانہ بننے والی لڑکیوں کی برہنہ ویڈیوز بھی بناتے تھے۔پولیس نے ملزمان سے 10 واقعات کی برہنہ ویڈیوز اورہزاروں برہنہ تصاویر بر آمد کر لی تھیں۔ دوران تفتیش انکشاف ہوا تھا کہ ملزم قاسم کم عمر لڑکیوں کو اپنی بیویکرن کے ذریعے ورغلا کر زیادتی کا نشانہ بناتا تھا۔ سی پی او فیصل رانا نے بتایا کہ ملزم قاسم کی اہلیہ کرن اپنے شوہر کی لڑکیوں سے زیادتی کی ویڈیو بناتی تھی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں