مولانا فضل الرحمان(fazal-ur-rehman) نے مطالبہ کیا ہے کہ بلوچستان حکومت انہیں سونپی جائے،ملین مارچ منسوخ کردوگا

جبکہ خیبرپختونخواہ حکومت میں بھی ان کے کچھ لوگوں کو وزارتیں دی جائیں

fazal-ur-rehman

 مولانا فضل الرحمان(fazal-ur-rehman) بلوچستان کی حکومت ملنے کے بدلے ملین مارچ منسوخ کرنے کیلئے تیار ہیں، گزشتہ ہفتے جمعرات کے روز جمیعت علمائے اسلام ف کے سربراہ نے ایک اہم شخصیت سے ملاقات کی تھی، خیبرپختونخواہ حکومت میں بھی حصہ مانگا گیا ہے . تفصیلات کے مطابق معروف صحافی اور تجزیہ کار عارف حمید بھٹی کی جانب سے نجی ٹی وی چینل کے پروگرام سے گفتگو کرتے ہوئے بڑا دعویٰ کیا گیا ہے .

عارف حمید بھٹی نے کہا کہ مولانا فضل الرحمن(fazal-ur-rehman) کے پاس مدرسوں کے بچوں کی پاور ہے۔پچھلی جمعرات کی رات مولانا فضل الرحمن کے کچھ اہم لوگوں سے مذاکرات ہوئے ہیں۔مولانا فضل الرحمن کے ترجمان بتائیں ہمیں مولانا نے کس صورت میں لانگ مارچ نہ کرانے کی یقین دہانی کرائی ہے؟ مذاکرات میں مولانا فضل الرحمن نے بلوچستان سے متعلق اپنی خواہش کا اظہار کیا ہے جب کہ وفاق میں بھی حصہ مانگا ہے۔اس کے ساتھ ساتھ مولانا فضل الرحمن(fazal-ur-rehman) نے کہا ہے کہ مجھے خیبرپختونخوا میں بھی حصہ دیا جائے اور میرے لوگوں کو کہیں ایڈجسٹ کیا جائے۔

نواز شریف(M.nawaz sharif) نے کہا ’’میں کبھی بھی ڈیل نہیں کروں گا، قانونی جنگ لڑوں گا

انہوں نے کہا کہ ہر آدمی نااہل حکومت سے نجات حاصل کرنے کیلئے بے تاب ہے.ہمیں قوم کے ہرطبقے سے اچھے تاثرات مل رہے ہیں. مولانا فضل الرحمان(fazal-ur-rehman) نے کہا کہ میاں نوازشریف نے ہمارے لاک ڈاؤن کی حمایت کردی ہے.ن لیگ نے اکتوبر کے آزادی مارچ میں شرکت کی یقین دہانی کروا دی ہے.کیپٹن صفدر نے نوازشریف سے ملاقات سے متعلق آگاہ کیا.انہوں نے کہا کہ ترجمان پاک فوج کے بیان کا خیرمقدم کرتاہوں. واضح رہے آج کوٹ لکھپت جیل میں سابق وزیراعظم نواز شریف اور شہباز شریف کے مابین ملاقات ہوئی. ملاقات میں ممکنہ ڈیل کی خبروں پر بھی بات چیت ہوئی.

نواز شریف نے ایسی تمام خبروں کو مسترد کرتے ہوئے کہا کہ کبھی بھی ڈیل نہیں کروں گا. قانونی جنگ لڑوں گا، آج بھی ووٹ کو عزت دو کی بات پر قائم ہوں.اسی طرح مرکزی رہنماء ن لیگ کیپٹن ر صفدر نے کہا کہ میاں نوازشریف بالکل ٹھیک ہیں، میاں نوازشریف نے واضح کہا کہ کوئی ڈیل نہیں ہورہی ہے،نہ میں ڈیلوں پر یقین کرتا ہوں، ان ڈیلوں نے72سالوں میں ملک کا یہ حال کردیا ہے. اب فیصلے کا وقت ہے میں فیصلہ کروں گا ،ڈیل نہیں کروں گا. انہوں نے کہا کہ کشمیر کو 22کروڑ عوام ایل اوسی کراس کرکے آزاد کروائیں گے، مودی نے جب دیکھا کہ کمزور حکومت ہے تواس نے مقبوضہ کشمیر پر شب خون ماردیا، کشمیر نعروں ،باتوں، قراردادوں اور کھمبوں پر پوسٹرز لگانے سے آزاد نہیں ہوگا.

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں