انسانوں کے ساتھ ساتھ ربوٹس بھی کشمیریوں(Kashmiris) پر تعینات

Kashmiris

کشمیر آج بھی خون کی وادی بنا ہواہے۔ساری دنیا میں ہاہاکار مچنے اور جنرل اسمبلی
میں بھی کشمیریوں(Kashmiris) کی دہائی سنائی دینے کے باوجود بھی ہٹ دھرم ہندو اپنے ناپاک
عزائم سے باز نہیں آیااور آج تین ماہ گزر چکے مظلوم کشمیریوں(Kashmiris) کی داد رسی کے
لیے عالمی دنیا سے کوئی مردمجاہد نہیں اٹھا۔دس لاکھ کے قریب بھارتی فورسز
مقبوضہ پٹی میں موجود ہیں اور اب انہوں نے جدیدربوٹس بھی نہتے کشمیریوں پر
تعینات کرنے کی تیاری کر لی ہے۔
اسلحے سے لیس روبوٹس فائرنگ کرنے کے ساتھ سرحدی علاقوں میں نقل و حرکت
پر بھی نظر رکھیں گے ۔مقبوضہ کشمیر میں قابض بھارتی حکومت کی کشمیریوں
پر ظلم ڈھانے کی نئی حکمت عملی سامنے آی ہے جس میں مقبوضہ وادی میں
550 مسلح روبوٹس تعینات کرنے کی تیاری شروع کردی۔
اسلحے سے لیس روبوٹس فائرنگ کرنے کے ساتھ سرحدی علاقوں میں نقل و
حرکت پر بھی نظر رکھیں گے۔

سنی دیول(sunny deol) حقیقی زندگی میں پاکستان اور پاکستانیوں کی محبت کے گرویدہ

مقبوضہ وادی میں بھارتی لاک ڈائون کو 100 دن مکمل ہو چکے ہیں اور کاروبار
زندگی بدستور معطل ہے۔بھارتی قابض فورسز نے ابھی تک کرفیو بھیختم نہیں کیااور
اب جدید روبوٹس بھی تعینات کرنے کے لیے کمر کس لی ہے۔ان ربوٹس میں سیڑھیاں
چڑھنے، رکاوٹیں عبور کرنے اور گرینیڈ پھینکنے کی صلاحیت بھی موجود ہے۔
بھارتی وزارت دفاع نے550 روبوٹس کی خریداری کا عمل شروع کردیا ہے۔
ان ربوٹس کو بھارتی فوج گھر گھر تلاشی اور محاصرے کے دوران بھی استعمال
کرے گی۔ربوٹس مقبوضہ کشمیر میں تعینات راشٹریہ رائفل کے حوالے کیے جائیں
گے۔دوسری جانب مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فورسز کی پابندیاں 103 روز سے
برقرار ہیں۔ کاروباری مراکز بند، انٹرنیٹ بدستور معطل ہے۔جمعے کی نماز کے
بعد احتجاج کے پیش نظر پابندیاں مزید سخت کردی گئی تھیں۔5اگست سے سری نگر
کی جامع مسجد سمیت دیگر بڑی مساجد میں نماز کی ادائیگی پر پابندی ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں